پھر دو عیدیں!!!!

…فیاض اللہ خان…

 پاکستان میں ایک مرتبہ پھر دو عیدیں منائی جارہی ہیں۔جمعرات کی شب رات سوا10 بجے مسجد قاسم علی خان کے پیش امام نے صرف خیبر پختونخوا کے مختلف علاقوں سے موصول ہونے والی شہادتوں کو بنیاد بناتے ہوئے جمعہ کو یکم شوال کا اعلان کر دیا۔

مسجد قاسم علی خان سے مفتی شہاب الدین پوپلزئی نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ انہیں24 شہادتیں موصول ہوئی ہیں جن میں چاند دیکھنے کی تصدیق کی گئی جبکہ مرکزی رویت حلال کمیٹی کو وہ چاند کہیں دکھائی نہ دے سکا۔

پاکستان میں شوال المکرم کا چاند ہمیشہ تنازعہ کا باعث بنا رہتا ہے۔مرکزی رویت حلال کمیٹی مفتی منیب الرحمان کی زیر سرپرستی چاند کی رویت کا اعلان کرتی ہے جس میں چاند کے نظر آنے کی شہادتیں پورے ملک سے موصول کی جاتیں ہیں۔

مرکزی رویت ہلال کمیٹی، محکمہ موسمیات، انسٹی ٹیوٹ آف پلانیٹری آسٹرو فزکس (اسپا) اور نیوی کے جدید سائنسی آلات کی مدد اور نمائندوں کی شہادتوں کی بنیاد پر چاند کا اعلان کرتی ہے جبکہ مسجد قاسم علی خان کی انتظامیہ اپنی مسجد کی چھت پر چڑ ھ کر ہی چاند کو دیکھ لیتی ہے ۔مفتی شہاب الدین پوپلزئی کوتو 24 شہادتیں موصول بھی ہوگئیں۔

حیرت انگیز بات تو یہ ہے کہ اس بار دو عورتوں کی جانب سے چاند کی شہادتیں بھی قبول کی گئیں ہیں۔ایسا لگتا ہے کہ مسجد قاسم علی خان میں صرف شوال کا چاند دیکھنے کیلئے ہی اجلاس طلب کیا جاتا ہے ہے جس میں صوبہ خیبر پختونخوا کے سینئر وزیر بھی موجود ہوتے ہیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ پشاور سمیت ملک کے کسی حصے میں عید کا چاند نظر آنے کا سوال ہی نہیں پیداہوتا، چاند نظر آنے کی تمام شہادتیں جھوٹ پر مبنی ہیں۔

جامعہ کراچی کے انسٹی ٹیوٹ آف پلانیٹری آسٹرو فزکس (اسپا) کے سابق سربراہ ڈاکٹر شاہد قریشی نے کہاکہ 35منٹ سے 40منٹ کے دورانیہ کے دوران موجود رہنے والا چاند بھی بمشکل دوربین سے دکھائی دیتاہے جبکہ پشاور میں چاند کا دورانیہ 15سے 17 منٹ تھا جسے عام آنکھ تو دور کی بات طاقت ور دوربین بھی نہیں دیکھ سکتی تھی جبکہ چاند کراچی میں 27منٹ اور گوادر میں 29منٹ رہا کراچی میں تو سیاہ بادل چھائے ہوئے تھے تاہم گوادر اور جیوانی میں مطلع صاف تھامگر وہاں بھی چاند نہ دیکھے جانے کی اطلاعات سب سے پہلے آئیں۔

 ڈاکٹر شاہد قریشی نے کہا کہ پشاور میں چاند دکھائی دینے کی تمام شہادتیں جھوٹ پر مبنی ہیں یہ افسوسناک بات ہے کہ وہاں ہزاروں سال پرانے علم سے استفادہ نہیں کیا جاتا۔

قائد تحریک صوبہ ہزارہ نے بھی صوبہ خیبر پختونخواہ کے چاند کے حوالے سے فیصلے کو تسلیم نہیں کیااور مرکزی رویت ہلال کمیٹی کے اعلان کے مطابق باقی پاکستان کے ساتھ ہفتے کو ایک عید منانے کا اعلان کیا ہے۔

خیبر پختونخوا پاکستان کا صوبہ ہوتے ہوئے اس کا سعودی عرب کے ساتھ عید منانے کا اعلان عقل سے بالا تر ہے ۔نہ جانے ہم کب تک ان مسائل میں الجھے رہیں گے اور ایک ہی ملک میں دو عیدیں منانے کا سلسلہ کب تک چلتا رہے۔

حکومت کو اس سلسلے میں اپنی رٹ قائم کرنے کیلئے سنجیدہ اقدامات کرنے کی ضرورت ہے تاکہ ملک کے تمام صوبے ایک ہی عید منائیں

Advertisements

2 Responses to پھر دو عیدیں!!!!

  1. طارق راحیل نے کہا:

    دل سے عید الفطر کی مبارک باد قبول ہو

  2. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاۃ
    http://stardate.org/nightsky/moon

    اس لنک پر جا کر چیک کر لیں۔ میں ایک ادارے میں آءی ٹی منیجر ہوں ۔ میں نے خود چاند دیکھا ، پھر تصدیق کے لءے اپنی بہن کو بھی دکھایا اور قاسم علی خان جا کر گواہی دی ۔

    یو ایس نیول والوں کی ویب ساءٹ کے مطابق چاند دیکھا جا سکتا تھا ۔ نءے چاد کی پیداءش GMT کے مطابق صبح 10 بجے بتاریخ 8 ستمبر کو ہوءی پاکستان میں اس وقت دن تین بج رہے تھے ۔9 ستمبر کی شام کو اس چاند کو 27 گھنٹے اور 45 منٹ ہو چکے تھے۔ اب بتاءیں میں کیا کروں ۔

    جھوٹے کے لءے کافی ہے کہ وہ سنی سناءی بات آگے پہنچا دے۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: