کشمیرجو ہمیں بھولتا جارہا ہے

…دانیال دانش…

کشمیر جو ایک بھولی ہوئی داستان بنتا جا رہا ہے ۔مملکت خداداد اس قدار داخلی خلفشار کا شکار ہوچکی ہے کہ اب کسے معلوم کہ کو ن سے دن کیا ہوا تھا ۔مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم انتہا کو پہنچ چکے ہیں ۔آئے روز نوجوان سری نگر کی شاہراہوں پر پاکستانی پر چم لئے نکلتے ہیں ۔اور گولیوں سے بھون دئیے جاتے ہیں ۔بھارتی فوجی اہلکاروں کی جانب سے خواتین سے زیادتی اور مساجد کی بے حرمتی معمول بن گئی ہے ۔

مگر اب کشمیر کو کون پوچھتا ہے ۔حد تو یہ ہے سری نگر میں کرفیو کا عالم ہے ۔راستے بند ہیں اور سڑکوں پر بھارتی فوج کاگشت ہے ایسے میں بھی سرفروشوں کے قافلے بھارتی قبضے کے خلاف نکلتے ہیں۔شہر میں اخبارات تک نہیں چھپ سکتے مگر ہمارے میڈیا کیلئے یہ کوئی خبر ہی نہیں ہے ۔

اخبارات میں کشمیر کی خبریں مشرف دور میں ہی سکڑنا شروع ہوگئی تھیں۔مگر اب توفرنٹ یا بیک پیج پر شاذوناذر ہی کشمیر کی خبر نظر آتی ہے ۔

آج 19جولائی ہے ۔جس دن کشمیریوں نے پاکستان سے الحاق کا فیصلہ کیا تھا ،قیام پاکستان سے بھی پچیس دن قبل 19 جولائی1947کو کشمیریوں کی نمائندہ جماعت آل جموں و کشمیر مسلم کانفرنس کا کنونشن سری نگر میں ہوا ۔سردار ابراہیم خان کی رہائش گاہ پر منعقد ہونے سے کنونشن میں طویل بحث و مباحثہ کے بعد قرارداد الحاق پاکستان منظور کی گئی۔

قرارداد میں کہا گیا کہ جغرافیائی، اقتصادی، لسانی، ثقافتی اور مذہبی اعتبار سے ریاست کا پاکستان سے الحاق ضروری ہی، کیونکہ ریاست کی آبادی کا 80 فیصد حصہ مسلمانوں پر مشتمل ہے ۔

کنونشن میں سرکردہ افراد نے شرکت کی تھے ۔اورواضح رہے کہ اس کنونشن سے قبل18 جولائی1947کو قانونِ آزادی ہند منظور ہوگیا ۔جس کے تحت تمام ریاستوں کو آزادی دی گئی کہ وہ دو ریاستوں ہندوستان یا پاکستان میں سے جس کے ساتھ چاہیں الحاق کرلیں۔

Advertisements

One Response to کشمیرجو ہمیں بھولتا جارہا ہے

  1. آپ بازی لے گئے ۔ ميں اس پر آج لکھنا چاہتا تھا پھر خيال آيا کہ پہلے لوگوں کو تحريک آزادی جموں کشمير کی تاريخ کا خلاصہ پيش کروں ۔ چنانچہ کچھ تاخير ہو گئی ۔ ہمارے حکمرانوں کی مہربانيوں سے دورِ حاضر کا پاکستانی جموں کشمير کو اپنی پريشانی کا سبب سمجھنے لگ گيا ہے جبکہ قائداعظم نے کہا تھا کہ جموں کشمير پاکستان کی شہ رگ ہے ۔ قائداعظم زيرک اور ذہين تھے ۔ آج پاکستان درياؤں کے پانی کو ترس رہا ہے اپنی نااہليوں کی پاداش ميں

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: