ڈاکٹر شاہد مسعود اب آروائی نیوز پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟

…دانیال دانش…

اور جناب ڈاکٹر شاہد مسعود دوبارہ اے آر وائی نیوزپر”ویوز آن نیوز “کے پروگرام کے ساتھ نمودار ہوگئے ہیں۔اس سے پہلے موصوف جیونیوز میں تھے ۔جہاں انہوں نے معدودے چند اشخاص کو ملا کر ایک شخص کیخلاف پروگرامات شروع کئے ۔جس پر یہ مشہور ہو گیا کہ موصوف کو زرداری فوبیا ہوگیا ہے ۔

 

کسی ایک کے خلاف پروگرامات کرنا اور دوسرے گروپ ،پارٹی اور اداروں کو معافی دے دینے سے تو یہی ظاہر ہوتا کہ جانبداری برتی جارہی ہے ۔یاذاتی لڑائی چل رہی ہے ۔شاہد مسعود کے پروگرام ”میرے مطابق“ کے ساتھ بھی یہی کچھ ہوا۔

 

 اے آروائی نیوز جہاں سے انہوں نے صحیح معنوں میں صحافتی کیرئیر کا آغاز کیا تھا۔وہاں سے جیونیوز اور پھر پی ٹی وی کی چیئرمینی اور پھر دوبارہ جیونیوز کے بعد ڈاکٹر صاحب آے آر وائی نیوز پر نمودار ہوئے ۔ویسے تو وہ گزشتہ مہینے کے اوائل میں ہی اے آروآئی کو دوبارہ جوائن کرچکے تھے ۔مگرباقاعدہ کرنٹ افیئرز پروگرام کا سلسلہ انہوں نے رواں ہفتے سے شروع کیا ہے ۔ابتدائی پروگرامات میں توموصوف کچھ کمزور سے نظر آئے ۔اور بار بار اپنی صفائیاں پیش کرتے رہے ۔

 

آئیے دیکھتے ہیں۔ ڈاکٹر شاہد مسعود مزید کتنا وقت اے آر وائی میں پڑاؤ کرتے ہیں۔اوروہاں ان کے پروگرامات کے موضوعات کیا ہوتے ہیں۔

Advertisements

7 Responses to ڈاکٹر شاہد مسعود اب آروائی نیوز پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟

  1. محمودالحق نے کہا:

    ڈاکٹر صاحب کو پسند کرنے والوں کی ایک بڑی تعداد ہے ۔ پیٹی وی کو جوائن کرنا پھر چھوڑنا اب جیو ۔ کہیں کچھ تو ایسا ہے جو جاننا ضروری ہے ۔ صحافت اور سیاست میں قربتیں دوریاں کیا رنگ دکھاتی ہیں ۔

  2. Rashid Khan نے کہا:

    لوٹ کے بدھو گھر کو آئے

  3. Imran Jadoon نے کہا:

    جتھے دی کھوتی اوتھے آن کھلوتی
    (جہاں کی گدھی وہیں آکھڑی ہوئی)

  4. عثمان نے کہا:

    کسی زمانے یں ان کے پروگرام اچھے ہوتے تھے۔
    اب مکمل طور پر فضولیات کی بھر مار ہوتی جا رہی ہے۔

  5. یاسر عمران نے کہا:

    ڈاکٹر شاہد صاحب، فٹ بال کی گیند کی مانند ہو گئے ہیں ۔ جو باری باری ہر چینل کے میدان میں جا رہی ہے۔

  6. محمداسد نے کہا:

    میرا نہیں خیال کہ اس میں کوئی معیوب بات ہونی چاہیے۔ ڈاکٹر صاحب صحافی ہیں اور دیگر پیشوں کی طرح صحافت میں ترقی پر قدغن موجود نہیں۔ کئی نامور صحافی مثلاَ حسن نثار، جاوید چودھری اور مبشر لقمان بھی اپنے اداروں سے وابستگی تبدیل کرچکے ہیں۔ ایسے میں ڈاکٹر صاحب پر تنقید بالکل بے جا معلوم ہوتی ہے۔

  7. واجد نے کہا:

    چینلز خود جب بکتے ہیں
    تو کوئی بات نہیں
    اگر صحافی نے نیا چینل جوائن کر لیا تو کیا حرج ہے
    اور پھر ویسے بھی اگر اچھی تنخواہ ملے تو ہر آدمی کا حق ہے کہ وہ
    اپنے مستقبل کے بارے سوچے

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: