بلا عنوان

بلا عنوان

 تحریر … دانیال دانش

سوچا تو یہی تھا کہ روزنامہ ڈان میں اکیس اپریل کو شائع ہونے والے اشتہار کے اوپر” بلاعنوان “لکھ کر بلاگ پر پوسٹ کردوں گا۔ اور آپ دوستوں کے ساتھ مل کر اس اشتہار کے پیچھے چھپی لہو لہوداستاں کے حوالے سے عنوان سوچوں گامگر پھر جب کچھ لوگوں سے گفتگو ہوئی ۔توانہیں اس اندوہناک سانحے کا علم تک نہ تھا ۔جس پرافسوس ہوا کہ ملک کے ایک حصے میں لوگوں پر قیامت ٹوٹ پڑی جبکہ دیگر علاقوں میں بسنے والوں کو اس سانحے کا علم ہی نہیں ہے ۔

 اشتہار تو آپ نے پڑھ ہی لیا ہوگا۔جس سے یہ ثابت ہوگیا کہ گزشتہ ہفتے کو پاک آرمی کی جانب سے کی جانے والی بمباری کے نتیجے میں جاں بحق ہونے والے100 کے قریب افرادعام شہری تھے۔پہلے پہل تو انتظامیہ اور عسکری ذرائع کی جانب سے شدت پسندوں کے مارے جانے کی اطلاعات جاری کی گئی مگر جب معاملے ہاتھ سے نکلتا نظر آیا تو پھر وہ سب کچھ ہوا جو اشتہار میں نظرآرہا ہے ۔جبکہ پاکستان ہیومین رائٹس کمیشن کے وادی تیرہ میں تفتیش کار زرطیف خان نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ وہ جب طیارے کی بمباری میں ہلاک ہونے والے افراد کی فاتحہ خوانی کے لیے جاں بحق افراد کے گھرگئے تو ان کو وہاں پتہ چلا کہ پہلے تیرہ میں حمید نامی ایک شخص کے گھر پر بم پھینکاگیا۔ جب لوگ مدد کرنے پہنچے جس میں اکثریت قریب ہی سڑک تعمیرکرنے والے مزدورں کی تھی تو دوبارہ بمباری کر دی گئی۔ ہیومن رائٹس کے تفتیش کار کے مطابق ہلاک ہونے والوں کی تعداد 92ہے جن میں26 بچے اور چھ عورتیں شامل ہیں۔ زخمی ہونے والے افراد کی تعداد70 سے زیادہ ہے۔

 

آپ ہی بتائیے لہولہوداستاں کے بعد انگریزی روزنامے میں آنے والے اس اشتہار کو میں کیا نام دوں

 

Advertisements

One Response to بلا عنوان

  1. khalid نے کہا:

    جب تک آرمی اپنے ہی لوگوں پر ظلم و ستم کرتی رہیگی، اس وقت تک آرمی کا کوئی بھی فرد انتقام سے کہیں بھی محفوظ نہ رہ سکے گا، نہ ملک کے اندر، نہ باہر، نہ سروس کے دوران، نہ ریٹائرمنٹ کے بعد

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: